کوئ شکواہ نہ ذندگی سے

ذندگی تلخ ہوتی جاتی ہے

تم بھی اب غمگسار اپنے نئین ۔

کوئ شکواہ نہ ذندگی سے رہا

کوئ شکواہ بھی یار تجھ سے نئین-

حالټ وصل مین بھی جاڼ بہار

حالټ وصل یار اپنی نئین ۔

ذندگی موجزون کی عادی سئ

دل یہ اب موجزون سے بہلتا نئین ۔

فاصلے ختم ہونے والے تھے

بجھ گئی آگ دل جلے ہی نئین –

قربتین درمیان نہ لاو کے ہم

مانا مرتے ہین پر مرے تو نئین –

سسکیان قتل مت کرو کے ہم

خشک سانسون کے اب تو عادی نئین –

⁃ عابد قریشی

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s